Mujhay Saya Na Mila - مجھے سایہ نہ ملا

اک اک پل کٹتا ہے انتظار میں 
سکوں ڈھونڈتا پھرتا ہوں اس دیار میں 
بس تھوڑا سایہ ہی تو چاہا تھا
پر وقت کی آندھی نے خواہش کے بادل اڑا ڈالے 
اور میں ایک بارپھر سایہ تلاش کرنے لگا
مجھے رہائی نہ مل سکی 
وہ تنہائی نہ مٹ سکی
سایہ نہ مل سکا
سکوں نہ مل سکا
Post a Comment

Popular posts from this blog

A look at the extremist mindset of Pakistan (The Maya Khan incident)

Outcasts - The Ahmadis of Pakistan

Feelings of an Ahmadi enduring endless Persecution

First job at MTA Pakistan

3 Days to Remember (The Last Jalsa Salana in Rabwah)

Rohan - Part 2

Rohan - Part 1

My Mother - Amtul Hafeez Begum

کچھ تلخ باتیں

Somber Eid