Posts

Showing posts from 1994

آس ہے تلاش ہے - Aas Hai Talash Hai

آس ہے تلا ش ہے  اک ہمسفرکی اک ہم نظر کی جومہکی رتوں میں ساتھ دے  جو طوفاں میں اپنا ہاتھ دے جو ہو سراپا بہار پھوٹتی ہو جس سے خوشبوئے گلزار جسکی پوجا میں کروں دل و جان سے جس سے محبت میں کروں پورے ارمان سے چاہت کی انتہا کردوں میں  گر وہ کہے تو مَر  دوں میں سننے کی جسکی آہٹ میں ترستا ہوں ملنے کی امید بھی رکھتا ہوں گرچہ ابھی وہ صرف اک خیال ہے آس ہے تلاش ہے

Mujhay Saya Na Mila - مجھے سایہ نہ ملا

اک اک پل کٹتا ہے انتظار میں 
سکوں ڈھونڈتا پھرتا ہوں اس دیار میں  بس تھوڑا سایہ ہی تو چاہا تھا پر وقت کی آندھی نے خواہش کے بادل اڑا ڈالے  اور میں ایک بارپھر سایہ تلاش کرنے لگا مجھے رہائی نہ مل سکی  وہ تنہائی نہ مٹ سکی سایہ نہ مل سکا سکوں نہ مل سکا

Memories

Across the road near the alley
Here lies my unfulfilled past

Why was I such a dreamer
Why didn’t the dreams last

An end like a rain drop
Whose beginning was fast

I lost all my virtues
No feelings like a desert vast

Gone is now the precious time
And here I stand gazing at the past

14-5-94