آس ہے تلاش ہے - Aas Hai Talash Hai

آس ہے تلا ش ہے 
اک ہمسفرکی
اک ہم نظر کی
جومہکی رتوں میں ساتھ دے 
جو طوفاں میں اپنا ہاتھ دے
جو ہو سراپا بہار
پھوٹتی ہو جس سے خوشبوئے گلزار
جسکی پوجا میں کروں دل و جان سے
جس سے محبت میں کروں پورے ارمان سے
چاہت کی انتہا کردوں میں 
گر وہ کہے تو مَر  دوں میں
سننے کی جسکی آہٹ میں ترستا ہوں
ملنے کی امید بھی رکھتا ہوں
گرچہ ابھی وہ صرف اک خیال ہے
آس ہے تلاش ہے
Post a Comment

Popular posts from this blog

A look at the extremist mindset of Pakistan (The Maya Khan incident)

Outcasts - The Ahmadis of Pakistan

Feelings of an Ahmadi enduring endless Persecution

First job at MTA Pakistan

3 Days to Remember (The Last Jalsa Salana in Rabwah)

Rohan - Part 2

Rohan - Part 1

My Mother - Amtul Hafeez Begum

کچھ تلخ باتیں

Somber Eid